جانوروں پر صلہ رحمی کا بھی اجر ملے گا

قَالَ رَسُولَ اللہ ﷺ: ﴿ فِيْ کُلِّ ذَاتِ کَبِدٍ رَطْبَۃٍ أَجْرٌ ﴾

’’ہر زندہ جگر والے کے بارے میں اجر ہے‘‘

رسول اللہ ﷺ نے فرمایا:

ایک آدمی ایک راستے پر چل رہا تھا کہ اسے شدید پیاس لگی پھر اس نے ایک کنواں دیکھا تو اس میں اتر کر پانی پیا پھر جب باہر نکلا تو دیکھا کہ ایک کتا زبان نکالے پیاس کی وجہ سے کیچڑ کھا رہا ہے۔ اس آدمی نے کہا: جس طرح مجھے شدید پیاس لگی تھی اس کتے کو بھی پیاس لگی ہوئی ہے پھر کنویں میں اترا تو اپنے جوتے کو پانی سے بھر لیا پھر اسے اپنے منہ میں پکڑا حتیٰ کہ اوپر چڑھ آیا پھر کتے کو پانی پلایا تو اللہ نے اس کی قدر دانی کی اور اسے بخش دیا۔

لوگوں نے کہا: یا رسول اللہ! کیا ہمیں جانوروں کے بارے میں بھی اجر ملے گا؟

تو آپ نے فرمایا: ہر زندہ جگر والے کے بارے میں اجر ہے۔

الموطأ روایۃ ابن القاسم: ۴۳۴، وأخرجہ البخاری (۲۳۶۳) ومسلم ( ۱۵۳/ ۲۲۴۴)

کسی مخلوق پر ظلم کرنا جائز نہیں ہے۔ ایک عورت نے بلی کو باندھ کر رکھا اور بھوکا مار دیا تو اللہ نے اس عورت کو جہنم میں بھیج دیا۔ دیکھئے صحیح بخاری (۲۳۶۵) وصحیح مسلم (۲۲۴۲، دارالسلام: ۵۸۵۴) کلاھما من حدیث مالک عن نافع عن ابن عمر رضی اللہ عنہ۔

fbshare