وہ عمل جس سے اللہ خطائیں معاف اور درجات بلند کرتا ہے

قَالَ رَسُولَ اللہ ﷺ:

﴿ أَلاَ أُخْبِرُکُمْ بِمَا یَمْحُو اللہ بِہِ الْخَطَایَا وَیَرْفَعُ بِہِ الدَّرَجَاتِ؟﴾

رسول اللہ ﷺ نے فرمایا:

کیا میں تمھیں وہ عمل نہ بتادوں جس کے ذریعے سے اللہ خطائیں مٹاتا ہے اور درجات بلند فرماتا ہے؟

تکلیف کے وقت پورا وضو کرنا، مسجد وں کی طرف قدموں کے ساتھ کثرت سے چلنا اور نماز کے بعد دوسری نماز کا انتظار کرنا، یہ رِباط ( جہاد کی تیاری) ہے، یہ رباط ہے، یہ رباط ہے۔

الموطأ روایۃ ابن القاسم: ۱۳۴، وأخرجہ مسلم ( ۲۵۱) من حدیث مالک بہ.

رباط سرحدوں پر جہاد کے لئے مستعد رہنے کو کہتے ہیں اور اسی طرح نماز کی تیاری کر کے دوسری نماز کا انتظار رباط ہے۔

جو شخص جتنی دور سے چل کر مسجد آتا ہے تو اس کے لئے اُتنا ہی زیادہ ثواب ہے۔

ابو بکر بن عبدالرحمن (تابعی ) رحمہ اللہ فرماتے تھے: جو شخص صبح یا شام کو صرف مسجد کے ارادے سے مسجد جائے تاکہ خیر سیکھے یا سکھائے پھر گھر واپس آئے تو یہ شخص اس مجاہد کی طرح ہے جو اللہ کے راستے میں جہاد کر کے مالِ غنیمت لئے ہوئے واپس لوٹتا ہے۔ (الموطأ ۱/ ۱۶۰، ۱۶۱ ح ۳۸۳ وسندہ صحیح)

سیدنا ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ فرماتے تھے: جب تم میں سے کوئی شخص نماز پڑھ کر اپنی جائے نماز پر بیٹھ جاتا ہے تو فرشتے اس کے لئے دعائیں کرتے رہتے ہیں: اے اللہ! اسے بخش دے، اے اللہ! اس پر رحم فرما۔ اگر وہ اپنی جائے نماز سے اٹھ کر نماز کے انتظار میں مسجد میں جائے تو وہ حالتِ نماز میں ہی رہتا ہے۔ (الموطأ ۱/ ۱۶۱ ح ۳۸۴ وسندہ صحیح)

fbshare