لوگوں میں بدترین انسان کون؟ بدزبان شخص

حدثنا ابن أبي عمر:أنا سفیان عن محمد بن المنکدر عن عروۃ عن عائشۃرضی اللہ عنہا، قالت: استأذن رجل علی رسول اللہﷺ و أنا عندہ فقال: ((بئس ابن العشیرۃ أو أخو العشیرۃ۔)) ثم أذن لہ قلما دخل فألان لہ القول، فلما خرج قلت: یا رسول اللہ! قلت ما قلت ثم ألنت لہ القول؟ فقال :((یا عائشۃ ! إن من شر الناس من ترکہ الناس أو ودعہ الناس إتقاء فحشہ۔))

عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ میں رسول اللہ ﷺ کے پاس موجود تھی جب ایک آدمی نے اندر آنے کی اجازت مانگی تو آپ نے فرمایا:  ’’یہ اپنے خاندان کا بُرا آدمی ہے‘‘۔

پھر آپ نے اسے آنے کی اجازت دے دی، جب وہ آیا تو آپ نے (سختی کے بجائے) نرمی سے گفتگو کی، پھر جب وہ چلا گیا تو میں نے کہا:

یا رسول اللہ! (ﷺ)آپ نے پہلے وہ بات فرمائی ،پھر اس شخص کے ساتھ نرمی سے گفتگو کی؟

تو آپ(ﷺ) نے فرمایا:

اے عائشہ! لوگوں میں بد ترین انسان وہ ہے جس کی بد زبانی کی وجہ سے لوگ ’’اسے چھوڑ دیں‘‘یا فرمایا ’’(لوگ)اس سے دور رہیں‘‘۔

شمائل ترمذی:349 وسندہ صحیح،سنن ترمذی: 1996 وقال: ’’صحیح‘‘۔

صحیح البخاري: 6054، صحیح مسلم: 2591

شرح و فوائد:

1. مجروح راویوں پر اہلِ علم کا جرح کرنا صحیح اور جائز ہے۔

2. چونکہ وہ نامعلوم شخص بد اخلاق اور گستاخ قسم کا تھا، لہٰذا رسول اللہ ﷺنے اس کے ساتھ اس وجہ سے نرمی فرمائی کہ کہیں یہ شخص بد اخلاقی اور گستاخی کا ارتکاب نہ کر بیٹھے، دربارِ نبوی کی توہین نہ کر بیٹھے اور یہ ظاہر ہے کہ نبی ﷺ کی توہین کرنا کفر ہے۔

لہٰذا آپ ﷺ نے نرمی کرتے ہوئے اس شخص کو کفر اور گناہ سے بچا لیا، بے شک آپ رحمۃ للعالمین ہیں۔ﷺ

3. اگر کوئی شرعی عذر ہو تو پیٹھ پیچھے بُرا کہنا جائز ہے۔

4. شریر اشخاص کی عدم موجودگی میں لوگوں کو اُن کے شر سے آگاہ کرنا جائز ہے، تاکہ لوگ ان شر سے محفوظ رہیں۔

اِس بلاگ پوسٹ کی اصل کتاب کا حوالہ: شمائل ترمذی حدیث نمبر 349

تحقیق و تخریج و شرح و فوائد: شیخ زبیر علی زئی رحمہ اللہ

 

جواب دیں

Please log in using one of these methods to post your comment:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s